کوہ کن کوہ کن نہیں ہوتا

زار - راحیلؔ فاروق کی اردو شاعری کی کتاب

کوہ کن کوہ کن نہیں ہوتا
جانِ من! عشق فن نہیں ہوتا

لوگ پوچھیں تو ٹال جاتا ہوں
ورنہ اتنا مگن نہیں ہوتا

خستہ پائی نے ہوش چھین لیے
خواب میں بھی وطن نہیں ہوتا

رہ گزاروں میں سڑتی ہے ننگی
بے کسی کا کفن نہیں ہوتا

وحشتوں کا الیم تر دوزخ
شہر ہوتا ہے، بن نہیں ہوتا

بات کرتے کبھی کبھی راحیلؔ
ضبط کرنے پہ من نہیں ہوتا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے